2017: کمرشل ایئر لائنز کے لیے محفوظ ترین سال

ایئر لائن انڈسٹری کی ایک تحقیق کے مطابق سنہ 2017 کمرشل ایئر لائنز کے لیے محفوظ ترین سال رہا۔

دی ایوی ایشن سیفٹی نیٹ ورک اور ڈچ کنسلٹینسی ٹو70 کی علیحدہ علیحدہ رپورٹس کے مطابق گذشتہ برس دنیا میں کہیں بھی مسافر جیٹ طیارے کو حادثہ پیش نہیں آیا۔

رپورٹس کے مطابق گذشتہ برس دنیا بھر میں پہلے سے بھی زیادہ مسافر طیاروں کی پروازیں چلائی گئیں۔

تاہم ڈچ کنسلٹینسی ٹو70 نے خبردار کیا ہے کہ مسافر طیاروں پر اعلیٰ سطح کے حفاظتی اقدامات کے باوجود حادثے کی ’غیر معمولی‘ کم شرح کو ’خوش قسمتی‘ قرار دیا جا سکتا ہے۔
روس طیارہ حادثہ: لاشوں کی تلاش کے لیے آپریشن جاری

روس میں مسافر طیارہ گر کر تباہ، 61 افراد ہلاک

ایکواڈور کا فوجی طیارہ ایمیزون میں تباہ،22 ہلاک

نیپال میں مسافر طیارہ گر کر تباہ، 23 افراد ہلاک

ایئر لائن سیفٹی نیٹ ورک کی ایک رپورٹ کے مطابق گذشتہ برس دس مہک فضائی حادثات میں 79 افراد ہلاک ہوئے جبکہ سنہ 2016 میں 16 فضائی حادثات میں 303 افراد مارے گئے۔

رپورٹ کے مطابق 73 لاکھ 60 ہزار مسافر پروازوں میں سے اوسطً ایک کو حادثہ پیش آیا۔

تنظیم کے اعداد و شمار میں ان شہری ہوائی جہازوں کو شامل کیا گیا ہے جس میں 14 افراد کے بیٹھنے کی گنجائش ہوتی ہے۔

سنہ 2017 کا سب سے بدترین فضائی حادثہ اس وقت پیش آیا جب ترکی کا ایک کارگو جہاز کرغستان کے ایک گاؤں پر گرا جس میں عملے کے چار ارکان سمیت 35 افراد ہلاک ہوئے۔

رواں برس یکم جنوری کو کوسٹ ریکا میں ہونے والے ایک طیارے کے حادثے میں کم سے کم 12 مسافر ہلاک ہو گئے۔

ایئر لائن سیفٹی نیٹ ورک کی رپورٹ میں فوجی یا ہیلی کاپٹر حادثات کا شمار نہیں کیا گیا جس کا مطلب ہے کہ سنہ 2017 میں برمی Y-8 فوجی ٹرانسپورٹ جہاز کے ایک بدترین حادثے میں ہلاک ہونے والے 122 افراد کو ان اعدا و شمار میں شامل نہیں کیا گیا۔

ان اعدا و شمار میں چھوٹے طیاروں کے حادثات کو بھی شامل نہیں کیا گیا ہے۔

گذشتہ دو دہائیوں سے فضائی حادثوں میں ہونے والی اموات میں بتدریج کمی ہو رہی ہے۔

دی ایوی ایشن سیفٹی نیٹ ورک کے مطابق سنہ 2005 میں دنیا بھر میں ایک ہزار سے زیادہ افراد فضائی حادثات کے نتیجے میں ہلاک ہوئے۔

دنیا میں آخری مہلک مسافر جیٹ حادثہ نومبر سنہ 2016 میں کولمبیا میں پیش آیا جبکہ مسافر طیارے کا آخری بڑا حادثہ ایک سال پہلے مصر میں پیش آیا جس میں 100 سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے تھے۔