فائبر سے بھرپور غذائیں فلو کے خلاف انتہائی موثر

غذائیں
غذائیں

فائبر جسم کو انفلوئنزا سمیت کئی وائرسوں سے محفوظ رکھتا

ملبورن، آسٹریلیا: ایک نئی تحقیق سے انکشاف ہواکہ سردی اور فلو کے شکار افراد اگر اپنی غذا میں ریشے (فائبرز) کا استعمال بڑھائیں تو وہ بہت حد تک اس سے محفوظ رہ سکتے ۔ اس خبر کو بھی پڑھیں : چقندر کا جوس دل کے مریضوں کے لیے اکسیر قرار

ہم جانتےکہ فائبر کے کئی فوائداور ان کا باقاعدہ استعمال امراضِ قلب، ذیابیطس، معدے کے امراض اور دیگر بیماریوں کو دور رکھتاتاہم اب فائبرز کی ایک اور اہمیت سامنے آئیکہ یہ سردی اور فلو سے بھی لڑتےان میں انفلوئنزا وائرس سب سے زیادہ مقبولجو ہرسال دنیا کی 20 فیصد آبادی کو اپنی لپیٹ میں لیتا ۔ اس خبر کو بھی پڑھیں : پانی کے بدلتے ہوئے درجہ حرارت سے تیرنے والا روبوٹ

آسٹریلیا کی ممتاز موناش یونیورسٹی کے سائنس دانوں نے یہ بھی کہا کہ فائبر والی غذائیں پھیپھڑوں کو مضبوط بنا کر دمے اور الرجی سے بھی بچاتی ۔ اس سے جسم وائرس سے لڑنے کے قابل ہوجاتااور یوں انسانوں کو کئی امراض سے بچانے کی صلاحیت رکھتا ۔

لیکن یہ بنیادی تحقیق چوہوں پر کی گئیجس سے معلوم ہواکہ ریشے دار غذا فلو کے حملے سے محفوظ رکھتیجبکہ اس کا استعمال بڑھانے سے جسم میں مرض بھگانے کی صلاحیت مزید بڑھ جاتی ۔

سائنس دانوں کی ٹیم پہلے سے جانتی تھی کہ فائبر والی غذائیں پھیپھڑوں کی سوزش کو دور کرتیبالخصوص دمے اور الرجی کے معاملے میں یہ بہت مؤثر ثابت ہوئیلیکن جب چوہوں کو فائبر کھلایا گیا تو اس سے خون کے سفید خلیات سرگرم ہوئے اور وائرس سے لڑنے کی قوت میں اضافہ بھی ہوا جن میں انفلوئنزا کا وائرس سرِفہرست ۔

ماہرین نے کہاکہ بچوں اور بوڑھوں کا قدرتی دفاعی نظام کمزور ہوتااور اسے فائبر سے مضبوط بنایا جاسکتا ۔ غذائی ماہرین کہتےکہ دلیے، سیاہ لوبیہ، سیریلز، جو، رس بھری، انجیر اور بادام میں فائبر کی اچھی مقدار پائی جاتی ۔