سبز چائے کے ذریعے حساس دانتوں کا علاج

sabz chaye

بیجنگ: دانتوں میں ٹھنڈا اور گرم پانی لگنا ایک تکلیف دہ صورتحاللیکن اب ماہرین نے سبز چائے سے ایک مرکب نکالاجس کے ذریعے حساس دانتوں کے اس مرض سے نجات مل سکتی ۔

صرف امریکا میں ہی 25 فیصد آبادی دانتوں کی حساسیت کی شکار اور ان کے لیے گرم غذا یا آئسکریم کھانا ناقابلِ برداشت ہوتا ۔ دانتوں کی اس کیفیت کے علاج کے لیے اب تک کوئی مؤثر طریقہ دریافت ن ہوسکا ۔ دانتوں کی حفاظتی پرت انیمل دھیرے دھیرے ختم ہو جاتیاور دانت کی اگلی پرت ڈینٹائن نمایاں ہو جاتیاور اس پر ٹھنڈی اور گرم اشیا بہت تکلیف دیتی ۔ ڈینٹائن میں دانتوں کی حساس رگیں ہوتیجو سرد اور گرم اشیا کا احساس دلاتی ۔

اب ڈووہان یونیورسٹی چین کے ڈاکٹر چوئی ہوانگ نے گرین ٹی کے پولی فینولز نکال کر اس میں ایک نینو ہائیڈروکسی ایپیٹائٹ شامل کرکے ایک بایومٹیریل (حیاتی مادہ) بنایا ۔ واضح ر کہ سبز چائے میں جو پولی فینول پایا جاتااس کا پورا نام ایپی گیلوکٹیچن تھری گیلاٹ (ای سی جی سی)اور اس میں میسو پورس سلیکا نینوپارٹیکلز شامل کیے۔ اب اگر یہ مٹیریل دانتوں پر لگایا جائے تو ڈینٹائن کو نہ صرف بند کرتابلکہ انیمل کو تباہ کرنے والے بیکٹیریا کے حملے کو بھی روکتا ۔

اگر آپ ایک مرتبہ یہ مٹیریل دانتوں پر لگائیں تو 96 گھنٹوں تک یہ خاص کیمیکل خارج کرکے ڈینٹائن کی حساسیت روکتا ۔ توقعکہ اگر یہ دریافت مصنوعہ کی صورت میں بازار میں آ گئی تو اس کی کامیابی کے بہت روشن امکانات ۔