زیورات جنہیں آنکھوں کے ’’اندر‘‘ پہنا جاسکتا ہے

نیویارک کے ڈاکٹر ایمِل چائن آنکھوں کے اندر زیورات پہنانےکےماہر ۔ نیویارک: نیویارک کے ایک ڈاکٹر نے سب سے ممتاز نظر آنے کی خواہشمند خاتون کی آنکھ میں ایک زیور پہنا دیا جو پلاٹینم سے بنا ایک پانچ کونوں والا ستارہ ۔ خاتون نے بتایاکہ ان اس عمل میں کسی تکلیف کا سامنا ن کرنا پڑا۔ نیویارک میں پارک ایونیو لاسک سرجری کے ایک ماہر ڈاکٹر ایمِل چائن نے ایک خاتون کی آنکھ کے سفید حصے پر 3 ملی میٹر چوڑا پلاٹینم سے بنا ایک ستارہ لاسک سرجری کے ذریعے پیوست کیا ۔ خاتون نے آپریشن کو غیرتکلیف دہ بتایا اور کہا کہ ان آنکھ بند کرتے اور کھولتےوقت کسی تکلیف کا احساس ن ہوتا۔ اس زیور کی موٹائی صرف ایک ملی میٹرجسے آنکھ کی فطری خمیدگی کے لحاظ سے تیار کیااور تین دن بعد ایسا محسوس ہوتاکہ گویا وہ آنکھ میں موجود ہی ن ۔ اس کےلیے آنکھ کے ایک مقام پر ہلکا سا گڑھا بنایا گیا اور اس میں زیور فٹ کردیا گیا اور تین دن میں معمولی زخم مندمل ہوگیا۔ ڈاکٹر ایمل کے مطابق ان اس کام کا 20 سالہ تجربہ حاصلاور آنکھ میں زیور لگانے سے کسی قسم کی کوئی الرجی ن ہوتی کیونکہ پلاٹینم میں کچھ تبدیلیاں کرکے اسے طبی معیار کا بنایا گیا ۔ وہ آنکھ میں دل اور ستارہ شکل کے زیور چسپاں کرتےاور اگر کوئی اسے نکلوانا چا تو اس میں صرف پانچ منٹ لگتےاور زیور آنکھ سے باہر آجاتا ۔ ڈاکٹر ایمل کے مطابق یہ خالص کاسمیٹک سرجری کا عملجو ایک مہنگا عمل ۔ آنکھوں میں پہنی جانے والے خاص جیولری ہالینڈ میں بنائی جاتیتاہم ان کے بارے میں مشہورکہ اگر مشہور حسین خواتین ان سے ملاقات کرتی ر تو وہ مفت میں بھی سرجری کرسکتے ۔

متعلقہ خبر یں

روزانہ خبریں اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔