امریکا میں 12 خطرناک قیدی مکھن کی مدد سے جیل سے فرار

America

واشنگٹن: امریکی ریاست الاباما میں خطرناک جرائم میں ملوث 12 قیدی  مکھن کی مدد سے جیل سے فرار ہو۔

والکر کاؤنٹی کی پولیس کے سربراہ جم انڈر ووڈ نے نیوز کانفرنس کرتے ہوئے بتایا کہ یہ قیدی صرف  مکھن کی مدد سے جیل سے نکلنے میں کامیاب ہوئے۔ ان کا کہنا تھا کہ دراصل جیل میں نیا گارڈ تعینات ہوا جس کے پاس 140 اسیروں کا کنٹرول تھا جن میں یہ 12 قیدی بھی شامل ۔ ان کے پاس مکھن تھا جس سے انہوں نے اپنی بیرک پر لکھا نمبر تبدیل کرکے اس پر باہر کھلنے والے دروازے کا نمبر لکھ دیا۔

جم انڈر ووڈ نے بتایا کہ اس کے بعد ایک قیدی نے کنٹرول روم میں موجود نئے گارڈ سے کہا کہ دروازہ کھولو مجھے واپس اپنی بیرک میں جانا ، حالانکہ اس وقت وہ اپنی بیرک کے اندر ہی کھڑا تھا، نیا گارڈ چونکہ قیدیوں سے ناواقف تھا اس لیے جھانسے میں آگیا اور اس نے نادانستہ طور پر بیرک کا دروازہ کھول دیا جس کے نتیجے میں قیدی بیرک سے باہر نکللیکن جیل کے مرکزی دروازے سے باہر نکلنے کا مرحلہ ابھی باقی تھا، سب سے پہلے  انہوں نے قیدیوں والا لباس اتارا اور پھر خاردار تاروں پر کمبل ڈال کر دیوار پھلانگتے ہوئے باہر نکل ۔

کاؤنٹی پولیس سربراہ نے بتایا کہ اس تمام کام میں قیدیوں کو صرف 10 منٹ لگے جب کہ واقعے میں کوئی شخص زخمی ن ہوا تاہم قیدیوں کے فرار کا پتہ چلتے ہی پولیس فوراً حرکت میں آئی اور 8 گھنٹے کے اندر اندر سب کو دوبارہ گرفتارکرلیا گیا، جیل سے باہر نکلنے کے بعد زیادہ تر قیدی اکٹھے ہی ر جس کی وجہ سے ان پکڑنے میں آسانی رہی۔

بھاگنے کی کوشش کرنے والے قیدیوں کی عمریں 18 سے 30 سال کے درمیان جن میں سے دو پر اقدام قتل اور باقی چوری چکاری، ڈکیتی و منشیات جیسے جرائم میں ملوث ۔

جیل حکام نے ان قیدیوں کو لومڑی سے زیادہ چالاک قرار دیتے ہوئے واقعے کو ناتجربہ کار عملے کی انسانی غلطی قرار دیا۔