امریکہ اور پاکستان کے کشیدہ تعلقات میں اربوں ڈالر کی امداد پر بھی تنازع

پاکستان اور امریکہ کے تعلقات میں اعتماد کا فقدان اور تعلقات میں اُتار چڑھاؤ آتے رہتے ہیں لیکن ڈونلڈ ٹرمپ کے امریکہ کا صدر بننے کے بعد امریکہ اور پاکستان کے درمیان بیان بازی بہت بڑھ گئی ہے۔

سالِ نو کے موقع پر صدر ٹرمپ نے اپنی پہلی ہی ٹویٹ میں پاکستان کو آڑے ہاتھوں لیا۔ یہ بھی دلچسپ بات ہے کہ امریکہ نے پاکستان کو ہمیشہ ’امداد بند کرنے‘ کی دھمکی دے کر ڈرایا ہے۔

سنہ 1947 میں پاکستان کے وجود میں آنے کے بعد سے ہی پاکستان کو امریکہ سے امداد مل رہی ہے۔

پاکستان اور امریکہ کے تعلقات کے بارے میں مزید پڑھیے

’پاکستان نے ہمیں جھوٹ اور دھوکے کے سوا کچھ نہیں دیا‘

‘امریکہ کے یو ٹرن کا ماسٹر ڈونلڈ ٹرمپ’

پاکستان امریکہ تعلقات میں ’ڈو مور‘ کا نیا ایڈیشن

’پاکستان پر دباؤ ڈالنے کی امریکی صلاحیت محدود‘

گذشتہ روز پیر کو صدر ٹرمپ نے کہا کہ امریکہ نے پاکستان کو گذشتہ پندرہ برسوں میں 33 ارب ڈالر کی امداد دی ہے جبکہ پاکستان کا کہنا ہے کہ اسے اتنی امداد نہیں ملی۔ امریکہ پاکستان کو کیوں امداد دیتا ہے اور یہ امداد کس مد میں کتنی کتنی دی گئی ہے؟

اس رپورٹ میں پہلے نائن الیون کے بعد ملنے والی امداد اور دوسرے حصے میں پاکستان کے قیام کے بعد سے ملنے والی امریکی امداد کا جائزہ لیا گیا ہے۔ امریکہ پاکستان کو دفاعی اور سماجی شعبے کی ترقی کے لیے امداد دیتا ہے۔

نو ستمبر2001 میں نیو یارک کے ورلڈ ٹریڈ سینٹر پر دہشت گردوں کے حملے کے بعد جہاں دنیا میں بہت کچھ بدلا وہیں پاکستان اور امریکہ کے اس وقت سرد تعلقات پر جمی برف پگھل گئی۔

پاکستان دہشت گردی کے خلاف جنگ میں امریکہ کا سب سے اہم اتحادی بن گیا اور بدلے میں امریکی امداد ایک وقفے کے بعد دوبارہ پاکستان کے لیے بحال ہو گئی۔

اس دوران پاکستان کو اقتصادی اور عسکری امداد کے علاوہ دہشت گردی کے خاتمے کے لیے ہونے والے اخراجات کی ادائیگی بھی کی گئی۔

جارج ڈبلیو بش کی انتظامیہ نے ایک بار پھر پاکستان کی فوجی حکومت کے لیے امداد بحال کر دی۔ امریکہ نے جنرل پرویز مشرف کی فوجی حکومت کو مجموعی طور پر 11 ارب ڈالر دیے جس میں آٹھ ارب ڈالر فوجی امداد کی مد میں دیے گئے۔

سنہ 2002 سے 2010 کے دوران امریکہ نے پاکستان کو مجموعی طور پر 28 ارب 42 کروڑ ڈالر دیے۔

امریکہ نے اس دوران فوجی امداد کی مد میں 11 ارب 39 کروڑ ڈالر دیے جبکہ ان آٹھ برسوں میں دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ہونے والے اخراجات کی ادائیگی کی مد میں 9 ارب 27 کروڑ ملے۔ اسی دوران سماجی شعبے کے لیے امریکہ نے آٹھ ارب ڈالر دیے۔