جے آئی ٹی کے 40 نامعلوم اہلکاروں کو سامنے لایا جائے، نواز شریف

نوازشریف
نوازشریف

آصف زرداری جوکام کرروہ شرمناک ، نواز شریف

اسلام آباد: سابق وزیراعظم نواز شریف نے کہاکہ جے آئی ٹی کے 40 نامعلوم اہلکاروں کو سامنے لایا جائے اور واجد ضیا جے آئی ٹی کے سربراہملک و قوم کے مالک ن۔

سابق وزیراعظم نواز شریف نے احتساب عدالت اسلام آباد کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نیب مقدمہ میں بدعنوانی آج تک کسی کو نظر ن آئی، لیکن پوری قوم کو ناانصافی ضرور نظر آرہی ، ہر روز نئے راز افشا اور پول کھل ر ، نئے حقائق سامنے آر ، کل احتساب عدالت میں نیا انکشاف ہوا کہ جے آئی ٹی کی رپورٹ بنانے والے 40 افراد کو کوئی ن جانتا اور ان کے نام خفیہ رکھے۔

یہ بھی پڑھیں: وزیراعظم کے بیٹے پانامہ جے آئی ٹی کے سامنے پیش

نواز شریف نے کہا کہ جے آئی ٹی کے 30 تفتیش کنندگان اور عملے کے 10 افراد یہ کون سے نامعلوم افراد ، کس محکمے سے آئے ، ان یہ کردار کیوں سونپا گیا، انہوں نے پس پردہ رہ کر کیس تیار کیا، نہ کسی نے ان افراد کی منظوری دی اور نہ ہی وہ منظر عام پر آئے، یہ کون سے بے نام لوگجنہوں نے نیب مقدمے میں کردار ادا کیا، سوچنا چاہیے کہ ملک کی قسمت کا کون فیصلہ کررہا ، یہ تکلیف دہ کہانیجس کی کھوج لگانی چاہیے۔

یہ بھی پڑھیں:

نیب ریفرنسزکی سماعت؛ نواز شریف کی ملازمت سے متعلق اقامہ اورمعاہدہ عدالت میں پیش

ن لیگ کو چھوڑنے والے ارکان اسمبلی سے متعلق سوال کے جواب میں سابق وزیراعظم نے مزید کہا کہ مجھے چھوڑ کر جانے والے مفاد پرست ، یہ ہمارے لوگ ن ، ہماری حکومت بننے پر ہمارے پاس آ ۔ چوہدری نثار سے متعلق سوالات کے باوجود نواز شریف نے ان کا کوئی جواب ن دیا۔

یہ بھی پڑھیں: پانامہ کیس کی تحقیقات کیلئے قائم 6رکنی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے پہلے دن کیا ، کیا؟ حیرت انگیزصورتحال

واضح ر کہ کل احتساب عدالت میں جرح کے دوران نیب کے گواہ اور پاناما جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیا نے بتایا تھا کہ پاناما لیکس کیس میں جے آئی ٹی کے ساتھ 30 سے 40 ماہرین کام کر ر اور ان کا نام جے آئی ٹی رپورٹ میں ظاہر ن کیا گیا کیونکہ جے آئی ٹی نے ان کا نام خفیہ رکھنے کے لیے سپریم کورٹ کو درخواست دی تھی۔