عائشہ گلالئی کے عمران خان پر الزامات اور اصل حقائق

video
video

ناز بلوچ کے بعد ایک اور خاتون رہنماء عائشہ گلالئی بھی تحریک انصاف کو چھوڑ گئیں ۔ ناز بلوچ نے بھی پارٹی چھوڑنے کی وجہ تحریک انصاف میں خواتین کی عزت نہ ہونا بتائی تھی اور عائشہ گلالئی کا یہی موقفکہ تحریک انصاف میں خواتین کی عزت ن ۔ فواد چودھری کا کہنا ،حد تو یہکہ عائشہ گلالئی نے دو قدم آگے جاتے ہوئے عمران خان کو بدکردار یعنی کریکٹر لیس قرار دیتے ہوئے فرمایاکہ عمران خان کی وجہ سے خواتین کی عزت محفوظ ن۔

فواد چودھری کا کہنا کچھ اور ہی کہنے لگے کے معلوم ن یہ راتوں رات الہام ہوایا کوئی خواب آیاکہ کل عمران خان کو قائد اعظم ثانی کہنے والی عائشہ گلالئی آج عمران خان کی کردار کشی کررہیلیکن اس میں امیر مقام کے مسلسل رابطوں کا کردار ذیادہ نظر آتا ۔ فواد چودھری کا کہنا نئی سیاسی پیش بندی میں عمران خان اب عملی سیاست کی جانب گامزن ، یہی وجہکہ خاتون رکن اسمبلی کی من مانیاں خان نے برداشت کرنے سے انکارکردیا اور آیندہ ٹکٹ خالص سیاسی بنیادوں اور زمینی حقائق کو دیکھتے ہوئے دینے کا عندیہ دیا۔

بس پھر کیا تھا عائشہ گلالئی کیلئے عمران خان فرشتے سے شیطان بناور چشم زدن میں انہوں نے دیکھ لیا کہ عمران کو بدکرداری کی عادتیں انگلینڈ سے لگی تھیں جو 4 سال اسمبلی کی رکنیت کے مزے لینے کے بعد آج ان کو نظرآئی ۔ فواد چودھری نے کہا رہی ناز بلوچ تو نازبلوچ کو کون جانتا تھا صرف تحریک انصاف سے اس کو نام ملا اور اس کے اباجان بھی پی پی میں مقام بنانے میں کامیاب ہوئے ورنہ اس سے قبل دونوں کا کوئی خاص سیاسی قدکاٹھ نہ تھا زرائع بتاتےکہ ناز بلوچ نے تحریک انصاف کو مالی اور سیاسی طور پر ٹھیک ٹھاک چونا لگایا تھا۔

رہجاوید ہاشمی تو فالج اٹیک کے بعد ان سیاست چھوڑدینی چاہیے تھی لیکن وہ مسلسل مردہ گھوڑے میں جان ڈالنے کی کوششیں کرر ۔

نہ مجھے تحریک انصاف سے کوئی ہمدردیاور نہ کوئی واسطہلیکن خان کے مخالفین کو چاہیے مارکیٹ میں کچھ نیا لائیں، عمران خان زمانہ کرکٹ میں جو کچھ کر چکالوگ صرف خواب ہی دیکھ سکتےاس لئے کم از کم ایسا الزام لگائیں جو سمجھ بھی آئے اور بندہ مان بھی لے۔ ن لیگ والے بالکل خوش نہ ہوں کہ آپ کی اپنی ماروی میمن آن ریکارڈ کہہ چکیکہ ن لیگ کے رہنماء خواتین کی سلواریں اتارتے ، سپریم کورٹ پیشی کے موقع پر طلال چوہدری کی گندی نظریں کس پر تھیں سب کو معلوم ۔

باقی نجی محفلوں میں پی پی اور ن والے کیا کرتےیہ کوئی ڈھکی چھپی بات ن بلکہ بڑے فخر سے بتایا جاتاکہ آج فلانی کا شکار کیابڑی کوششوں کے بعد ہاتھ آئی اس لئے سواد آگیا ۔ تحریک انصاف اس معاملے میں کافی پیچھےاور اس میں شاد شاد ہی ایسے واقعات ہوتے ہوں گے ،رہی بات جلسوں کی تو مخلوط محفلوں میں ایسا روکنا ممکن ن ، اگر کوئی جماعت مخلوط جلسے کرے گی تو بدنظمی ہوگی کہ جلسے میں ہر ایرا غیرا شریک ہوتا . صرف جماعت اسلامی والوں کا سسٹم الگ ۔

باقی سیاست میں اس قسم کے الزامات کا کلچر ختم ہوناچاہیے کردارکشی کی گندی سیاست سے ملک کا نام بھی بدنام ہوتااور عوام بھی بدظن ہوتی ۔