پہلے سٹیڈیم بھرا ہوتا تھا اب خالی ہے

ہاکی کے عالمی شہرت یافتہ کھلاڑی پال لٹجنز کا کہنا ہے کہ پاکستان ہاکی فیڈریشن کو پاکستانی ہاکی کا کھویا ہوا مقام دوبارہ حاصل کرنے کے لیے سخت محنت کرنی ہوگی اور عصرحاضر کے تقاضوں سے خود کو ہم آہنگ کرنا ہوگا۔

ہالینڈ سے تعلق رکھنے والے پال لٹجنز ورلڈ الیون کے ساتھ پاکستان کے مختصر دورے پر آئے تھے۔ اس دورے میں انہیں پاکستان ہاکی فیڈریشن کی جانب سے ہال آف فیم میں بھی شامل کیا گیا۔

یاد رہے کہ پال لٹجنز کی وجۂ شہرت پنالٹی کارنرز پر گول کرنے کی تھی اور انہیں طویل عرصے تک بین الاقوامی ہاکی میں سب سے زیادہ گول کرنے کا اعزاز حاصل رہا۔ ان کے 268 گول کا ریکارڈ پاکستان کے سہیل عباس نے اپنے نام کیا ۔

70 سالہ پال لٹجنز نے بی بی سی اردو کو دیے گئے خصوصی انٹرویو میں کہا کہ انہیں پاکستان دوبارہ آکر بہت خوشی ہوئی ہے۔ یہ کل کی بات معلوم ہوتی ہے کہ 1981 میں ہالینڈ کی ٹیم نے کراچی میں تیسری چیمپئنز ٹرافی جیتی تھی اور وہ اس ٹورنامنٹ میں سب سے زیادہ گول کرنے والے کھلاڑی تھے۔ انہیں یاد ہے کہ کراچی کا ہاکی کلب آف پاکستان اسٹیڈیم شائقین سےکھچا کھچ بھرا ہوا تھا لیکن اس بار جب وہ پاکستان آئے ہیں تو کراچی اور لاہور کے اسٹیڈیمز شائقین سے بھرے ہوئے نہیں ۔