صوبوں کا وفاقی فرٹیلائزر سبسڈی اسکیم کا حصہ بننے سے انکار

اسلام آباد: صوبوں نے وفاقی حکومت کی جانب سے کاشتکاروں کے لیے متعارف کروائی جانے والی فرٹیلائزر سبسڈی اسکیم کا حصہ بننے سے انکار کردیا ۔ ’’ایکسپریس‘‘ کو دستیاب دستاویز کے مطابق یہ انکشاف کاشتکاروں کے لیے فرٹیلائزر سبسڈی اسکیم 2017-18پر عملدرآمد کے لیے گزشتہ ہفتے وفاقی سیکریٹری نیشنل فوڈ سیکیورٹی اینڈ ریسرچ کی زیر صدارت ہونے والے اعلی سطح کے اجلاس میں کیا گیا ۔ اجلاس کے منٹس آف میٹنگ کی ’’ایکسپریس‘‘ کو دستیاب کاپی کے مطابق اجلاس میں فرٹیلائزر سبسڈی اسکیم کے سب سے بڑے شراکت دار صوبے پنجاب کے نمائندے نے سوال اٹھاتے ہوئے موقف اپنا کہ جب یوریا کی قیمت 1300 روپے فی بوریتو اس صورت میں وفاقی حکومت 100 روپے فی بوری کے حساب سے فرٹیلائزر پر سبسڈی کیوں دے رہی ۔ دستاویز کے مطابق حکومت پنجاب کے نمائندے کے اجلاس میں موقف اپنایا کہ محدود وسائل کی وجہ سے پنجاب حکومت کاشتکاروں کو سبسڈی کی فراہمی کے لیے وفاقی حکومت کی اعلان کردہ فرٹیلائزر سبسڈی اسکیم کا حصہ ن بنے گا جبکہ پنجاب حکومت پہلے ہی اپنے وسائل سے پوٹاش اور ڈی اے پی فرٹیلائزر پر سبسڈی فراہم کررہیجس کے جواب میں جوائنٹ سیکریٹری فنانس ڈویژن کی جانب سے اجلاس کے شرکا کو بتایا گیا کہ فرٹیلائزر وفاقی مسئلہ نتاہم وفاقی حکومت نے کاشتکار برادری کی فلاح و بہتری کے لیے فرٹیلائزر سبسڈی اسکیم متعارف کروائیلہٰذا یہ تمام صوبوں کی ذمے داریکہ وہ وفاقی حکومت کی اعلان کردہ اسکیم کا احترام کریں اور اس اسکیم میں اپنا اپنا کردار ادا کریں۔ اجلاس میں شریک خیبرپختونخوا حکومت کے نمائندے نے اس حوالے سے 31جولائی2017 کو وفاقی سیکریٹری خزانہ کو لکھا جانے والا لیٹر پیش کیا جس میں کہا گیاکہ خیبرپختونخوا حکومت وفاق کی جانب سے اعلان کردہ فرٹیلائزر سبسڈی اسکیم کی مخالفلہٰذا وہ اس اسکیم پر عملدرآمد کے حوالے سے ڈرافت نوٹیفکیشن کے ساتھ متفق و ہم آہنگ نجبکہ اجلاس میں شریک حکومت سندھ کے نمائندے نے بھی اس اسکیم میں شراکت داری کے لیے حکومت سندھ کی جانب سے کسی قسم کی حمایت کی یقین دہانی ن کروائی کیونکہ اجلاس میں شریک حکومت سندھ کے نمائندہ کا تعلق پلانٹ پروٹیکشن فیلڈ سے تھا۔ اس لیے انہوں نے اس اسکیم کے بارے میں حکومت سندھ کی ایما پر کسی قسم کا کوئی وعدہ ن کیا جبکہ بلوچستان کی جانب سے کسی نمائندے نے اجلاس میں شرکت ن کی۔ اجلاس میں تمام صوبوں کے نمائندوں کا موقف سننے کے بعد اجلاس کی صدارت کرنے والے وفاقی سیکریٹری نیشنل فوڈ سیکیورٹی اینڈ ریسرچ نے زور دیا کہ موجودہ صورتحال میں جب اس اسکیم کا سب سے بڑا شراکت دار صوبہ پنجاب اس اسکیم کا حصہ بننے پر رضامند ناور خیبرپختونخوا دوٹوک الفاظ میں اس اسکیم کو ماننے سے انکار کرچکا تو اس کے بعد وزارت خزانہ کو نوٹس لینا چاہیے اور یا تو اس فرٹیلائزر سبسڈی اسکیم پر نظر ثانی کی جائے یا پھر وزارت خزانہ خود فنڈز کا انتظام کرے تاکہ فرٹیلائزر سبسڈی کلیمز کی اسی فیصد رقم کی فوری ادائیگی کی جاسکے جبکہ فیڈرل بورڈ آف ریونیو وضع کردہ پیرا میٹرز کے مطابق چیک کرنے کے بعد باقاعدگی کے ساتھ ریفنڈ کلیمزجمع کروائے گا۔

متعلقہ خبر یں

روزانہ خبریں اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔